اک ذرا مجھ سے دمِ مرگ تماشہ نہ ہوا | غمگین شاعری| Urdu poetry broken heart

urdu poetry love sad | best urdu poetry in text | amazing urdu poetry

1 25

اک ذرا مجھ سے دمِ مرگ تماشہ نہ ہوا
بس اسی واسطے مُردہ مرا اچھا نہ ہوا

تیرے جانے پہ بھی کب حسبِ توقع ہوا کچھ ؟
میں بھی مٹی نہ ہوا تو بھی ستارہ نہ ہوا

جب بلاتے نہ تھے،روتا تھا، تڑپتا تھا بہت
اب بلایا ہے تو پاؤں ہوۓ شل،جا نہ ہوا

اس سے پہلے بھی کوئی دل میں تمھارے اترا؟
جی ! بہت اترے، مگر ایسا تماشہ نہ ہوا

کیسے ہیرے تھے جنہیں دفن کیا ہاتھوں سے
مجھ کو یہ دکھ ہے میں اللّه کو پیارا نہ ہوا

کیا میں رو دوں کہ مجھے کوئی خوشی مل نہ سکی؟
کیا یہ کم ہے کہ مرے غم میں اضافہ نہ ہوا !

غالب و میر و ولی دکنی و داغ بھی تھے !
اب شفیق ایسا کہوں کیوں؟ "کوئی تجھ سا نہ ہوا”

اک ذرا مجھ سے دمِ مرگ تماشہ نہ ہوا
بس اسی واسطے مُردہ مرا اچھا نہ ہوا

شاعری: نعمان شفیق

اگر آپ مزید ادس اردو شاعری پڑھنا چاہتے ہیں تو یہ لازمی دیکھیں

بدن سلگتا ہے تپتی جبین ہوتی ہے|بدن پر اشعار

If you want to read more urdu sad poetry please visit

amazing urdu poetry | best urdu poetry in text | urdu poetry love sad |urdu poetry text | urdu poetry broken heart | urdu poetry sad |urdu poetry sad 2 lines

1 تبصرہ
  1. […] اک ذرا مجھ سے دمِ مرگ تماشہ نہ ہوا | غمگین شاعری […]

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.