سچی باتیں اب بتانا جرم ہے | دوستی پر شاعری

poetry about friend in urdu

2 45

سچی باتیں اب بتانا جرم ہے
جھوٹ سے پردہ ہٹانا جرم ہے

روز ہوتا ہے تماشا اک نیا
آئنہ لیکن دِکھانا جرم ہے

شہر کا حاکم ہے مستی میں مگن
حالِ دل اس کو سنانا جرم ہے

بُھول بیٹھے اپنا ماضی اس طرح
اب اِنھیں رستہ سُجھانا جرم ہے

کیسے بدلے دور ظلمت، ہمنشیں؟
جبکہ ظلمت روشنانا جرم ہے

کون آئے کام کس کے ،کس طرح؟
دوسروں کے کام آنا جرم ہے

سب کے سب یوں پڑ گئے ہیں شرک میں
نعرہ ءِ وحدت لگانا جرم ہے

روز بٙکتا ہے یہاں جو دین پر
اُس کو ملزم تک ٹھہرانا جرم ہے

بڑھ گئے اذلان فتنے چارسو
جنس تقویٰ دل میں لانا جرم ہے

سچی باتیں اب بتانا جرم ہے
جھوٹ سے پردہ ہٹانا جرم ہے

شاعری: ازلان الرحمان

اگر آپ مزید مناجات، حمدیہ اشعار، نعت شریف یا  شان صحابہ پر کلام پڑھنا چاہتے ہیں تو یہ لازمی دیکھیں

2 تبصرے
  1. sklep کہتے ہیں

    Wow, wonderful blog layout! How lengthy have you been blogging for?

    you made running a blog glance easy. The total glance of your
    web site is excellent, let alone the content! You can see similar:
    e-commerce and here sklep

  2. najlepszy sklep کہتے ہیں

    Thank you for another informative site. The place else may just I get that kind of info written in such a perfect means?
    I have a mission that I’m simply now working on, and I
    have been on the glance out for such info. I saw similar here: ecommerce
    and also here: najlepszy sklep

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.