کبھی جو غم کے اندھیروں نے گھیر مارا مجھے | sad poetry 2 lines urdu

sad sad poetry | sad poetry in urdu text |sad poetry urdu 2 line

0 12

کبھی جو غم کے اندھیروں نے گھیر مارا مجھے
تمہاری یاد نے بڑھ کر دیا سہارا مجھے

میں ایک اشک ہتھیلی پہ دھر کے چلتا ہوں
ہزار سمت دکھاتا ہے یہ ستارا مجھے

تمہاری آنکھیں بھی کتنا بڑا سمندر ہیں
ملا نہ ان کا کبھی دوسرا کنارا مجھے

لٹا ہی دوں گا یہ سانسیں تری امانت ہیں
میں منتظر ہوں ملے کب ترا اشارا مجھے

بس ایک آخری حل تھا یہی اداسی کا
تری گلی سے جو احباب نے گزارا مجھے

رقیب تیرے لیے ہے پریشاں ، سوچتا ہوں
ترے نصیب کا غم بھی ملا نہ سارا مجھے

میں اب کے عمر گزاروں گا بس محبت میں
زمیں پہ بھیج دے خالق اگر دوبارا مجھے

وہ بانٹتا رہا اپنی وفا زمانے میں
میں چیخ چیخ کے کہتا رہا خدارا ،،مجھے،،

یہ کون کھیل گیا رہ نوردی سے میری
یہ کس نے ہے ترے لہجے میں پھر پکارا مجھے

اسی کی ضرب سے چھلنی ہوا بدن میرا
وہ پھول دوست جو تو نے غضب سے مارا مجھے

کچھ اس لیے بھی نہ میرا کوئی بنا احسن
تمام لوگ سمجھتے رہے، تمہارا مجھے

کبھی جو غم کے اندھیروں نے گھیر مارا مجھے
تمہاری یاد نے بڑھ کر دیا سہارا مجھے

شاعری: احسن اعجاز

وہ بار بار جو کہتا رہا جناب مجھے | سوال و جواب پر اردو غزلیہ شاعری

If you want to read more  sad poetry Urdu 2 line, please click

sad sad poetry | sad poetry in Urdu text |sad poetry Urdu 2 line |urdu poetry sad 2 lines |urdu poetry broken heart

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.