بھلا چکا ہوں جسے اُس کو سوچتا کیوں ہے | اردو غزل

Urdu poetry heart touching | Urdu poetry ghazal

0 6

بھلا چکا ہوں جسے اُس کو سوچتا کیوں ہے
مِرے حریف سے اِس دل کا رابطہ کیوں ہے

سوال جب بھی اُٹھاتے ہیں اپنی اجرت کا
امیرِ شہر غریبوں پہ چیختا کیوں ہے

یہ کون قیس کی صورت اتر گیا ہے یہاں
جنوں کے شہر میں روشن یہ مقبرہ کیوں ہے

بشر تو اور بھی رہتے ہیں یار بستی میں
تمہارا دل ہی فقط مثلِ آئینہ کیوں ہے

گِراں یہ بات بھی گزری ہے نسلِ آدم پر
شجر پہ "برق” پرندوں کا گھونسلا کیوں ہے

بھلا چکا ہوں جسے اُس کو سوچتا کیوں ہے
مِرے حریف سے اِس دل کا رابطہ کیوں ہے

شاعری : بابر علی برق

اگر آپ مزید اداس شاعری پڑھنا چاہتے ہیں تو یہ لازمی دیکھیں 

نہیں ہے تیرے سوا کوئی خوبرو دل میں | اداس شاعری

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.