لب پر مہر لگاؤ اور خاموش رہو | طنزیہ شاعری

آزادی اظہار رائے پر طنز کرتی ایک خوبصورت شاعری عمر عاطر صاحب کے قلم سے

0 46

لب پر مہر لگاؤ اور خاموش رہو
سب کچھ دیکھتے جاؤ اور خاموش رہو

اپنی حالتِ زار کا واحد ذمہ دار
قسمت کو ٹھہراؤ اور خاموش رہو

گھر سے دور کسی جنگل میں جا کرتم
خوابوں کو دفناؤ اور خاموش رہو

کچھ بھی کرلو تیرگی ختم نہیں ہوگی
سارے دیپ بجھاؤ اور خاموش رہو

روٹی ، کپڑا اور مکان کے نعرے سے
اپنا دل بہلاؤ اور خاموش رہو

سچ اکثر لوگوں سے ہضم نہیں ہوتا
جھوٹ کی فصل اگاؤ اور خاموش رہو

باغی اور سرکش سوچوں کو اے عاطر
زنجیریں پہناؤ اور خاموش رہو

لب پر مہر لگاؤ اور خاموش رہو
سب کچھ دیکھتے جاؤ اور خاموش رہو

شاعری: عمر عاطر

انگلیاں بھی جلا چکا ہوں میں ۔۔۔ جانے کیوں روشنی نہیں ہوتی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.