پسینے سے ہم نے نہایا بہت ہے | مزاحیہ شاعری

Urdu poetry funny | گرمی کی شدت پر لکھی گئی مزاحیہ شاعری نوجوان شاعر ساحل ریاض کے قلم سے

0 235

پسینے سے ہم نے نہایا بہت ہے
کہ گرمی نے یارو  ستایا بہت ہے

 

بسوں میں سفر کا تو منظر عجب ہے
کہ ذلت میں گرمی کا میل اب غضب ہے
مہکتی ہیں بغلیں تو چہرے نگینے
سرو پا پسینے کے بہتے خزینے
اِدھر ہے صدا اک چلو سب مدینے
اُدھر ایک بڑھیا ہے مرجا کمینے

 

پسینے سے ہم نے نہایا  بہت ہے
کہ گرمی نے یارو  ستایا بہت ہے

 

رخ مہہ جبیں پہ اجالا کیا ہے
ارے ہم کو سورج نے کالا کیا ہے
ابھی جائیں ملنے تو سب کوٹتے ہیں
ہے یہ کون کالا سبھی پوچھتے ہیں
وہ جو خواب شادی کے تھے ٹوٹتے ہیں
بس آنکھوں سے اب اشک ہی پھوٹتے ہیں

 

پسینے سے ھم نے نہایا  بہت ہے
کہ گرمی نے یارو  ستایا بہت ہے

 

ہے گرمی نے سب کو ستایا برابر
ہر اک بچہ اور ماما، تایا برابر
سویرے سویرے یوں رو کر اٹھایا
تہجد کا ننھے نے عادی بنایا
چھپا تھا جو راز اس سے پردہ ہٹایا
حسینوں کو میک اپ کے بن بھی دکھایا

 

پسینے سے ھم نے نہایا  بہت ہے
کہ گرمی نے یارو  ستایا بہت ہے

 

جو مہنگائی کی انتہا ہوگئی ہے
گو راحت اذیت فزا ہوگئی ہے
نہانے کو جائیں تو پانی نہیں ہے
یہاں آج بجلی بھی آنی نہیں ہے
کہ اے سی پہ بھی حکمرانی نہیں ہے
یہ ساحل کی تنہا کہانی نہیں ہے

 

پسینے سے ھم نے نہایا  بہت ہے
کہ گرمی نے یارو  ستایا بہت ہے
شاعری: ساحل ریاض

اگر اپ مزید مزاحیہ شاعری پڑھنا چاہتے ہیں تو یہ لازمی دیکھیں 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.