دربار مصطفی میں ، زار و قطار رویا | نعت شریف اردو | naat poetry 2 lines

naat lyrics in urdu writing | naat poetry in urdu | naat poetry in urdu two lines text

0 27

دربار مصطفی  میں ، زار و قطار رویا
اپنی جفائیں سوچیں ، میں بار بار رویا

طیبہ میں پھر رہا تھا ، مجرم بنا ہوا تھا
سوچے نبی  کے احساں ، میں بے شمار رویا

کیسے بتاؤں تم کو ، کس وقت چپ ہوا تھا ؟
آقا  کے شہر میں میں ، لیل و نہار رویا

اپنے نبی  کے قدموں ، کو ڈھونڈتا رہا میں
طیبہ کی گلیوں میں میں ، پیدل سوار رویا

پیارے نبی  کے در پر ، جذبات ہی عجب تھے
رویا وہاں خوشی سے ، اور سوگوار رویا

دامن تھا میرا خالی ، رب کا بنا سوالی
ان  کی شفاعتوں کا ، امیدوار رویا

من من کا اک قدم تھا ، جب واپسی ہوئی تھی
اظہر جدائی ان  کی ، میں دل فگار رویا

دربار مصطفی  میں ، زار و قطار رویا
اپنی جفائیں سوچیں ، میں بار بار رویا

شاعری: ڈاکٹر محمد اظہر خالد

naat lyrics in urdu writing | naat poetry in urdu | naat poetry in urdu two lines text | naat poetry in urdu | naat sharif in urdu written | naat poetry in urdu two lines

If you want to read more lyrics of naats please click

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.