خطاؤں سے پر ہے مری زندگانی |دعائیہ اشعار |urdu poetry dua

urdu poetry islamic | dua poetry urdu

1 27

خطاؤں سے پر ہے مری زندگانی
ہے گزری گناہوں میں ساری جوانی

 

الہی! کرم کر سنو یہ صداٸیں
اڑا ہی نہ لیں معصیت کی ہواٸیں
فقیروں کی سن لیں ذرا التجاٸیں
ترے روبرو کررہا ہوں دعاٸیں

 

وفادار ہے تو جفاکار ہوں میں
ہے غفار تو اور خطاکار ہوں میں
ترے در پہ حاضر شرمسار ہوں میں
تری بخششوں کا طلب گار ہوں میں

 

مجھے کامراں کر یہ قسمت جگا تو
عطا کر مجھے اپنی الفت عطا تو
فقط راہ اپنی پہ مجھ کو چلا تو
جو تجھ سے ہیں غافل نہ ان میں ملا تو

 

وہ جس دن ستارے بھی بے نور ہونگے
یہ انسان سارے بھی مجبور ہونگے
محبت کے رشتے بھی سب دور ہونگے
ہوا جرم ثابت تو ہم طور ہونگے

 

اے "ہمدرد” کوئی نہ ہوگا تمہارا
عمل نیک کرلے، ہے کافی اشارہ
اگر اس گھڑی چاہۓ کچھ سہارا
بنو یاں پہ تم ڈوبتوں کا کنارا

 

خطاؤں سے پر ہے مری زندگانی
ہے گزری گناہوں میں ساری جوانی

شاعری: ڈاکٹر شاکراللّٰہ ہمدرد

اگر آپ مزید مناجات، حمدیہ اشعار، نعت شریف یا  شان صحابہ پر کلام پڑھنا چاہتے ہیں تو یہ لازمی دیکھیں

urdu poetry islamic | dua poetry urdu | urdu poetry dua

ٰIf you want to read dua poetry in urdu, hamd poetry in urdu, naat sharif, or munqabat about sahabah , please visit

1 تبصرہ
  1. ücretsiz binance hesabi کہتے ہیں

    Thank you for your sharing. I am worried that I lack creative ideas. It is your article that makes me full of hope. Thank you. But, I have a question, can you help me?

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.