جن دنوں اپنے کوئی یار نہیں ہوتے تھے | اردو غزل شاعری

urdu poetry for friends| urdu poetry ghazal

3 29

جن دنوں اپنے کوئی یار نہیں ہوتے تھے
اُن دنوں ٹھیک تھے بے کار نہیں ہوتے تھے

جسم سے ہجر اگر رات میں ملنے آتا
درمیاں ہم کبھی دیوار نہیں ہوتے تھے

پہلے ہم لوگ تعلق پہ یقیں رکھتے تھے
پہلے ہم لوگ سمجھدار نہیں ہوتے تھے

اب تو اک پل کی خماری بھی نہیں ہے صاحب
ہم کبھی نیند سے بیدار نہیں ہوتے تھے

اپنے کمرے کی مَیں کھڑکی سے بھی لڑ پڑتا تھا
جب ترے آنے کے آثار نہیں ہوتے تھے

دَور اک ایسا بھی گزرا ہے سنا ہے میں نے
لوگ جب سادہ تھے ؛ فنکار نہیں ہوتے تھے

راز افشا نہیں ہوتے تھے کسی کے عرفان
جب مرے شہر میں اخبار نہیں ہوتے تھے

جن دنوں اپنے کوئی یار نہیں ہوتے تھے
اُن دنوں ٹھیک تھے بے کار نہیں ہوتے تھے

شاعری: عرفان منظور بھٹہ

اگر آپ دوست کے متعلق شاعری پڑھنا چاہتے ہیں تو یہ لازمی دیکھیں 

اگر تم عیب میرے دنیا والوں سے چھپا لیتے| دوستی شاعری

3 تبصرے
  1. Kennith کہتے ہیں

    Wow, marvelous weblog structure! How long have you ever been blogging for?
    you made blogging look easy. The entire look of your web site is fantastic, let alone the content!
    You can see similar here ecommerce

  2. e-commerce کہتے ہیں

    Hi, i think that i saw you visited my weblog
    thus i came to “return the favor”.I am attempting to find things
    to improve my web site!I suppose its ok to use a few
    of your ideas!! I saw similar here: Sklep online

  3. GSA List کہتے ہیں

    Howdy! Do you know if they make any plugins to
    help with Search Engine Optimization? I’m trying to get my site to rank for some targeted keywords but I’m
    not seeing very good gains. If you know of any please
    share. Kudos! You can read similar blog here: Backlink Portfolio

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.