ایک نہیں کتنی نسلوں کا مستقبل قربان ہوا | یوم ازادی پاکستان

Independence day poetry in Urdu| azadi poetry

4 31

ایک نہیں کتنی نسلوں کا مستقبل قربان ہوا
لا الہ الا اللہ پر قائم پاکستان ہوا

سر کٹوا کر زخم سجا کر خوں میں نہا کر جب نکلے
آزادی کا مشکل رستہ تب جا کر آسان ہوا

ہجرت، خون، اذیت، وحشت، ظلم و ستم اور کرب و بلا
آذادی کے روشن باب کا یہ روشن عنوان ہوا

خون کے دریا پار کیے تب خاک ِوطن آنکھوں میں بسی
سبز ہلالی پرچم جا کر تب اپنی پہچان ہوا

آج تلک اس پار کے کہساروں کی ہوائیں پوچھتی ہیں
کتنے آنچل تار ہوئے کس کس کا گھر سنسان ہوا

ہندو کا ہر ظلم سہا ہے ہم نے اپنے سینوں پر
آج اس ظلم کو سہہ سہہ کر مرا قافلہ بھی یکجان ہوا

ایک نہیں کتنی نسلوں کا مستقبل قربان ہوا
لا الہ الا اللہ پر قائم پاکستان ہوا

شاعری : سلیم اللہ صفدر

اگر آپ پاکستان کے متعلق مزید شاعری پڑھنا چاہتے ہین تو یہ لازمی دیکھیں 

4 تبصرے
  1. sklep internetowy کہتے ہیں

    Wow, amazing blog format! How lengthy have you been blogging for?
    you made blogging glance easy. The entire look of your web site is magnificent, let
    alone the content material! You can see similar: ecommerce and here sklep internetowy

  2. najlepszy sklep کہتے ہیں

    I have been surfing online more than 4 hours today,
    yet I never found any interesting article like yours. It’s pretty
    worth enough for me. Personally, if all site owners and bloggers
    made good content as you did, the internet will
    be much more useful than ever before. I saw similar
    here: najlepszy sklep and also here: najlepszy sklep

  3. sklep کہتے ہیں

    I am really grateful to the holder of this website who has shared this
    great piece of writing at at this time. I saw similar
    here: Najlepszy sklep

  4. sklep internetowy کہتے ہیں

    Great info. Lucky me I discovered your site by chance (stumbleupon).

    I have book marked it for later! I saw similar here: Najlepszy sklep

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.