دل اکتانے لگ جاتا ہے بزم آرائی سے | اداس شاعری

4 36

دل اکتانے لگ جاتا ہے بزم آرائی سے
اس لیے رشتہ قائم رکھتا ہوں تنہائی سے

یہ کیسا انجانا سا موسم در آیا ہے
گلشن کیوں ویراں ہے پھولوں کی رعنائی سے

یاروں کی محفل، چاۓ خانہ، اور شام کا وقت
کوئی دیکھے ایسے منظر کو گہرائی سے

اب کی بار میں آئینے کی طرح ٹوٹا ہوں دوست
اب کی بار نہیں ہوگا کچھ بھی یکجائی سے

ان لوگوں کے نام ونسب سے واقف ہے دنیا
جو رتبہ پاۓ شاہوں کی مدح سرائی سے

دیکھنا تم اک دن دروازے پر دستک ہوگی
اتنی امیدیں وابستہ ہیں ہرجائی سے

کل شب اس نے اپنا قصہ سنایا بچوں کو
عاطر جس کو عشق ہوا تھا اک صحرائی سے

دل اکتانے لگ جاتا ہے بزم آرائی سے
اس لیے رشتہ قائم رکھتا ہوں تنہائی سے

شاعری: عمر عاطر

اگر آپ مزید اداس شاعری پڑھنا چاہتے ہیں تو یہ لازمی دیکھیں 

مرتے جاتے ہیں سب کہانی میں ۔۔۔۔تیرا کردار کم نہیں ہوتا

4 تبصرے
  1. sklep online کہتے ہیں

    Wow, marvelous weblog format! How long have you
    ever been blogging for? you made blogging glance easy.

    The full look of your site is excellent, as smartly as the content material!
    You can see similar: sklep and here sklep online

  2. e-commerce کہتے ہیں

    Thanks for any other wonderful article. The place
    else may anybody get that type of info in such a perfect means of
    writing? I have a presentation next week, and I’m on the look for such information. I saw similar here: ecommerce and also here: e-commerce

  3. e-commerce کہتے ہیں

    Peculiar article, totally what I wanted to find. I saw similar here:
    Sklep online

  4. sklep internetowy کہتے ہیں

    Thanks for any other informative web site. Where else could I am getting that type of info written in such
    a perfect means? I’ve a project that I’m simply now working on, and I’ve been on the look out for such info.
    I saw similar here: Sklep internetowy

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.