پھول گھائل تک نہیں کانٹوں کی خونی بھیڑ سے | انقلابی شاعری

0 73

پھول گھائل تک نہیں کانٹوں کی خونی بھیڑ سے
منفرد رکّھا ، خودی کو معتبر ، تدبیر سے

شب سیہ کس قدر ہے بلبل کو نئیں معلوم ، اور
جگنوؤں کو مسئلہ کیا رات کی تفسیر سے

نیند سے یا خواب سے ہے ،کس سے ہے شکوہ ؟ کہو !
شدّتِ غم چاہئے یا خوف ہے تعبیر سے

انقلابی شخص نذرِ قید ہو سکتا ہے ، پر
کون باندھے گا شعوری سوچ کو زنجیر سے؟

ایک کشتی ہے کہ جسکا ناخدا کوئی نہیں
ایک جذبہ ہے کہ جو ڈرتا نہیں گھمبیر سے

محورِ امن و اماں سے کردے خارج نفس کو
وجد میں آ ، مشورہ کر خود میں پنہاں پیر سے

پھول گھائل تک نہیں کانٹوں کی خونی بھیڑ سے
منفرد رکّھا ، خودی کو معتبر ، تدبیر سے

شاعری: منہال زاہد سخی

اگر آپ مزید انقلابی شاعری پڑھنا چاہتے ہیں تو یہ لازمی دیکھیں 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.