براؤزنگ ٹیگ

urdu poetry beautiful

مجھے خون کچھ اور بہانا پڑے گا مجھے پھر سے، مطلب نہانا پڑے گا | اردو شاعری

مجھے خون کچھ اور بہانا پڑے گا مجھے پھر سے، مطلب نہانا پڑے گا گزشتہ کئی روز سے وہ خفا ہے دل و جان کہہ کر منانا پڑے گا عنایت جو بھی کی مرے دل میں رہ کر کبھی تو اسے آزمانا پڑے گا وہ کہتا ہے تصویر کا کیا کرو گے جدائی میں رکھ کر…

غموں میں بھی رہِ الفت کے راہی غم نہیں کرتے | غم پر اردو شاعری

غموں میں بھی رہِ الفت کے راہی غم نہیں کرتے خوشی کےجال میں بھی شوقِ منزل کم نہیں کرتے ہماری ہر خوشی کے واسطے جس نے لہو بیچا کم ازکم اُس کی پلکیں جانوربھی نم نہیں کرتے پتا ہےہم کسی کےدل میں رہنےکےنہیں قابل تبھی سجنے سنورنے کا تکلف ہم…

یاد کے پیڑ کی شاخوں پہ چہک ہوتی ہے | یاد پر اردو شاعری | urdu poetry sad

یاد کے پیڑ کی شاخوں پہ چہک ہوتی ہے اور پھر صبح کے ہنگام تلک ہوتی ہے جانا ہوتا ہے مجھے نیند کی وادی کی طرف سامنے سوچ کے رستے کی سڑک ہوتی ہے دوست پل بھر میں مرے راز اگل دیتے ہیں جیسے کشکول ہلانے سے کھنک ہوتی ہے غیر آباد علاقوں کی…

وہ نظر مجھ سے ملاتا ہے چلا جاتا ہے | خوبصورت اردو غزل

وہ نظر مجھ سے ملاتا ہے چلا جاتا ہے دل میں جذبات جگاتا ہے چلا جاتا ہے تیری دنیا کا تھکا ہارا مُسافر اک دن جسم کا بوجھ گراتا ہے چلا جاتا ہے رات کو آ کے تری یاد کا جگنو جاناں ظلمتِ شب کو مٹاتا ہے چلا جاتا ہے ایک ماتم سا سجا رہتا ہے…

صورتِ خواب جو آنکھوں سے لگایا جاتا | موبائل وڈیو کال پر اردو شاعری

صورتِ خواب جو آنکھوں سے لگایا جاتا کاش ہر خواب کو تعبیر بنایا جاتا (بیوی سے دور ایک شوہر کے دل کی آواز جو  وڈیو کال پر اپنی بیوی سے بات تو کر سکتا ہے ملاقات نہیں.) صورتِ خواب جو آنکھوں سے لگایا جاتا کاش ہر خواب کو تعبیر بنایا جاتا…

وہ بار بار جو کہتا رہا جناب مجھے | سوال و جواب پر اردو غزلیہ شاعری

وہ بار بار جو کہتا رہا جناب مجھے اس ایک بات نے دکھلائے کتنے خواب مجھے ہوا تو پھر نہ مری خاک تک بھی ڈھونڈ سکی کیا جو اس نے مسافت میں ہمرکاب مجھے خدا مزید کرے خوبرو تجھے لیکن بڑا ہی خوار کرے ہے ترا شباب مجھے بلا کی دھند میں رستہ…

سامنے جس کے ہوا کرتی تھی ہر بات میں چپ | خاموشی پر اشعار

سامنے جس کے ہوا کرتی تھی ہر بات میں چپ جاتے جاتے وہ مجھے دے گیا سوغات میں چپ لوگ کرتے ہیں نئے شہر کو آباد مگر چھوڑ کے جاتے ہیں اجداد کے دیہات میں چپ مجھ پہ تنہائیوں کا سایہ ہے سو اس لیے بھی ہر گھڑی ہر جگہ ہوتی ہے مری ذات میں چپ…

جابجا دھوکہ ہوا جیسا ہوا اچھا ہوا جان کر سب کی حقیقت بِھیڑ میں تنہا ہوا| تنہائی پر اشعار

جابجا دھوکہ ہوا جیسا ہوا اچھا ہوا جان کر سب کی حقیقت بِھیڑ میں تنہا ہوا بُجھتے دیکھا ہے بھروسے کے دیئے کو بارہا دشمنوں کے درمیاں کیسے کہوں کیا کیا ہوا بے وفائی پَر بھی لوگوں کو دلیلیں یاد ہیں میرا اپنے آپ سے اس بات پر جھگڑا ہوا…